Home / پاکستان / راولپنڈی اسلام آباد کے مابین "سٹی ٹور بس سروس”کے اجراء کی تیاری مکمل

راولپنڈی اسلام آباد کے مابین "سٹی ٹور بس سروس”کے اجراء کی تیاری مکمل

Lahore-Sightseing-Bus
اسلام آباد ۔9 جنوری (اے پی پی) پاکستان ٹوررزم ڈویلپمنٹ کارپوریشن(پی ٹی ڈی سی) نے جڑواں شہروں راولپنڈی اسلام آباد کے مابین "سٹی ٹور بس سروس”کے اجراء کی تیاری مکمل کر لی ہیں ‘ گورنر پنجاب ملک محمدرفیق رجوانہ (کل) بدھ کو باقاعدہ سٹی ٹور بس سروس کا افتتاح کرینگے ۔

راولپنڈی سے اسلام آباد پورے دن کے تفریحی دورہ کے لئے فی کس مسافر 1000روپے اور طلباء و طالبات کے لئے 700روپے فی کس کرایہ مقرر کیا گیا ہے‘تقریبا 6تا 8گھنٹے کے اس تفریحی دورہ کے دوران بسیں ہر تفریحی مقام پر 20منٹ سے 35منٹ تک رکے گی ‘تفریحی دورہ مکمل کرنے کے بعد لوگوں کو واپس اپنی اپنی منزل تک بھی پہنچایا جائے گا۔

پی ٹی ڈ ی سی کے ترجمان نے "اے پی پی ” سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ایم ڈی پی ٹی ڈی سی چوہدری عبدالغفور خان کی ذاتی دلچسپی اور کاوش سے پی ٹی ڈی سی سٹی ٹور بس سروس کا آغاز کر رہا ہے ۔45سیٹوں کی گنجائش کی دو بسیں‘تین ہائی ایس وینز سے سٹی ٹور بس سروس کا آغاز کیا جارہا ہے

۔سٹی ٹور بس کے روٹ کے مطابق فلشمین راولپنڈی سے بس چلے گی جو مری روڈ پر لیاقت باغ ‘کمیٹی چوک ‘چاندنی چوک ‘سسکتھ روڈ ‘فیض آباد سے سپر مارکیٹ پہنچے گی جہاں سے اسلام آباد سے مسافروں کو پک کر کے سید پور ویلیج ‘ فیصل مسجد ‘ مانومنٹ ‘ شکر پڑیاں ‘لیک ویو پارک سے ہوتے ہوئے واپس سپر مارکیٹ اور وہاں سے فلشمین راولپنڈی پہنچے گی۔

سٹی ٹور بس تمام سیاحتی اور تفریحی مقامات پر 20منٹ تا 35منٹ ٹھہرے گی۔پی ٹی ڈی سی نے سٹی ٹور بس سروس کے لئے ابتدائی طور پر فی کس مسافر 1000روپے اور سٹوڈنٹس کے لئے ڈسکاؤنٹ کرائے کے ساتھ 700روپے فی کس تجویز کیے ہیں۔

پی ٹی ڈی سی حکام کے مطابق تفریحی گروپس کو بھی خصوصی رعائیت دی جائے گی جو راولپنڈی اسلام آباد اس سروس سے استفادہ حاصل کرینگے ۔پی ٹی ڈی سی حکام کے مطابق گورنر پنجاب ملک محمد رفیق رجوانہ (کل) بدھ کو جڑواں شہروں راولپنڈی اسلام آباد کے مابین پی ٹی ڈی سی کی پہلی "سٹی ٹور بس سروس” کا افتتاح کرینگے ۔

تبصرے

تبصرے

Check Also

Road-construction-

چکوال سوہاوہ روڈ کیلئے 3 ارب روپے جاری

چکوال ۔ 22 جنوری (اے پی پی) رکن قومی اسمبلی میجر ر(ر)طاہر اقبال نے پیر …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے